News

Do you also fear your mother-in-law all the time?

دنیا بھر میں ساس بہو کی آپسی رنجش تو عام بات ہے لیکن بہو کا ساس کے لئے رنجش کا خوف میں تبدیل ہو جانا ایک اہم نفسیاتی مسئلہ ہے۔ نا صرف ساس بہو میں تلخی بلکہ ساس اور داماد کے درمیان مستقل تناؤ بھی اب ایک عام بات ہے۔

سائنسی زبان میں اسے ‘پینتھیرافوبیا’ کہا جاتا ہے جس کا مطلب ‘ساس کا خوف’ ہے۔

ماہرینِ نفسیات کے مطابق یہ تناؤ اور تلخیاں معمول کی باتیں ہیں لیکن اگر بہو یا ساس اور داماد یا ساس میں اختلافات اور رنجشیں حد سے زیادہ بڑھ جائیں تو یہ ایک دماغی مسئلہ بن جاتا ہے۔

ماہرینِ نفسیات نے چند علامتیں بھی بتائی ہیں جس سے ہم اسے دِماغ کا مسئلہ قرار دے سکتے ہیں۔ بتائی گئی علامتوں میں ‘ساس کا بہت زیادہ خوف یا ساس سے مسلسل شدید نفرت’، ‘ساس سے بچنے یا ہر ممکن طور پر رابطہ نہ کرنے کی کوشش کرنا’ اور ‘ساس کی موجودگی میں بوکھلاہٹ یا شدید تشویش میں مبتلا رہنا’ شامل ہیں۔

تاہم یہ ضروری نہیں ہے کہ ساس کے خوف کی کوئی وجہ ہو۔ اکثر و بیشتر یہ خوف بغیر کسی بڑی وجہ کے بھی بہت زیادہ اعصاب پر سوار رہتا ہے جس کے باعث کئی مسائل پیدا ہو جاتے ہیں۔

اگر کسی میں بھی یہ علامات موجود ہیں تو اپنے دوستوں میں بیٹھ کر اس بارے میں باتیں کرنے کے بجائے کسی نفسیات کے ڈاکٹر سے رجوع کریں تاکہ یہ نفسیاتی مسئلہ حل ہو سکے۔


Automatic Translated By Google

It is common for mother-in-law to have intercourse around the world, but it is an important psychological problem for a daughter-in-law to change into fear of grief. Not only bitterness in the mother-in-law, but also constant tension between the mother-in-law and the son-in-law, is now commonplace.

In scientific terms it is called ‘pantrifobia’ which means ‘fear of motherhood’.

According to psychologists, these tensions and bitterness are normal, but if the differences between the daughter-in-law or the mother-in-law or the mother-in-law become excessive, it becomes a mental problem.

Psychologists have also mentioned a few signs that we can call it a problem with asthma. Symptoms include ‘excessive fear of mother-in-law, or persistent hatred of mother-in-law’, ‘trying to avoid mother-in-law or not in any way possible’, and ‘being confused or having severe anxiety in the presence of mother-in-law’. ۔

However, it is not necessary that the mother-in-law has some reason for fear. Often, this fear causes too many nerves to move without cause, causing many problems.

If anyone has any of these symptoms, instead of talking to your friends about it, consult a psychiatrist so that the problem can be resolved.

Tanveer Ahmad

I'm a web desk author & covering national including international news and articles for SayfJee. Also, provide the sports updates regularly.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker