News

How did plane business class tickets cause trauma?

بینکاک میں وزن کم کرنے والی سرجری کے بعد دو بہنوں رینل اور ٹیری کے لیے اپنے شہر آک لینڈ کی 11 گھنٹے کی فلائٹ میں بزنس کلاس سے سفر کرنا کسی عیش سے کم نہیں ہونا چاہیے تھا۔

لیکن دونوں بہنوں اور ان کی والدہ ہوہانا کے لیے وہ وقت کسی ’صدمے‘ سے کم نہیں رہا جب تھائی ایئرویز کے سٹاف ٹیپ لے کر ان کے پاس آئے اور انھیں کہا کہ وہ ان کے بزنس کلاس سیٹ کے لیے جسامت میں ’بہت بڑی‘ ہیں۔

اس ’نفرت انگیز‘ واقعے کو چھ ماہ گزر چکے ہیں لیکن 59 سالہ ہوہانا کے ذہن میں اس تجربے کی تلخی ابھی تک برقرار ہے۔

انھوں نے کہا: ’سٹاف بار بار ہم سے ’زیادہ بڑا ہے، بہت بڑا ہے‘ کہہ رہے تھے۔ جب انھوں نے ہمیں چیک اِن کے وقت ہماری جسامت کو ماپا تو لوگ قطار لگا کر ہمیں دیکھ رہے تھے۔ انھوں نے جس طرح ہمارے ساتھ سلوک کیا وہ اتنا تضحیک آمیز تھا کہ ہماری آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے۔‘

زبان نہ سمجھنے کی دقت نے بھی مدد نہیں کی اور سٹاف نے انھیں بزنس کلاس میں داخلے سے منع کر دیا اور انھیں اکانومی کلاس یعنی سستے درجے میں بٹھایا۔

ہوہانا سماجی کارکن ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ وہ جب تک وزن کم نہیں کریں گی اس وقت تک ہوائی جہاز کا سفر نہیں کریں گی تاکہ تھائی ایئرویز میں ہونے والے مجروح کن تجربات دوبارہ ان کے اور ان کی بیٹیوں کے ساتھ نہ ہوں۔

انھوں نے کہا: ’ہم لوگ بزنس کلاس میں سفر کرنے کے لیے پرجوش تھے لیکن اس کی جگہ ہمیں گہرا صدمہ پہنچا۔‘

زیادہ تر ایئرلائنز اپنے چوڑے چکلے اوور سائز مسافروں کے لیے سیٹ بیلٹ میں توسیع کی سہولت رکھتے ہیں۔

لیکن تھائی ایئرویز نے کہا کہ ان کے بزنس کلاس میں سیٹ بیلٹ ایئر بیگز کے ساتھ منسلک ہیں جس کا مطلب یہ ہے کہ وہ اس میں توسیع نہیں کر سکتے۔ یہ لوگ ابھی تک اس وضاحت سے مطمئن نہیں ہیں۔

گذشتہ موسم گرما کے اپنے صدمہ انگیز سفر کے بعد سے ہوہانا اور ان کی بیٹیاں تھائی ایئرویز سے ٹکٹ کے پیسے واپس مانگ رہی ہیں۔ لیکن ايئرویز نے اس خاندان کو صرف بزنس اور اکانومی کلاس کے ٹکٹوں کی قیمت میں جو فرق ہے وہ ادا کرنے کی پیشکش کی ہے۔

انھوں نے اس ٹریول ایجنٹ فلائٹ سینٹر سے رابطہ کیا جس سے انھوں نے ٹکٹ بک کروایا تھا۔ اس کا کہنا ہے کہ وہ انھیں پورا پیسہ واپس کرے گی لیکن اس کے لیے انھیں چھ ماہ سے زیادہ عرصے کا انتظار کرنا پڑا ہے۔

جب بی بی سی نے تھائی ایئرویز سے رابطہ کیا تو ایک ترجمان نے بتایا کہ انھوں نے اپنے انتباہ کے نظام کو بہتر کیا ہے تاکہ ایجنٹس کو اس قسم کے مسائل سے باخبر رکھا جائے۔

یہ بہت افسوسناک ہے

یہ خانوادہ ڈیسٹینیشن بیوٹی کی جانب سے منعقدہ سفر پر تھا جو کہ اپنے گاہکوں کو وزن کم کرنے اور پلاسٹک سرجری کے لیے تھائی لینڈ بھیجنے میں اختصاص رکھتی ہے۔

ڈیسٹینیشن بیوٹی کے چیف ایگزیکٹو مارٹن اوسلن نے کہا کہ جس طرح ایئرلائنز نے حالات کو ہینڈل کیا اس سے انھیں ’بہت دکھ ہوا ہے‘ اور وہ ’حیرت زدہ بھی ہیں۔‘

تھائی سٹاف کے سلوک پر بھی کنفیوز ہیں کیونکہ بہت سے ’موٹے افراد بزنس کلاس کا ٹکٹ اس لیے بھی لیتے ہیں کہ وہ اکانومی کلاس کی سیٹ پر آرام سے نہیں سما سکتے ہیں۔‘

شہری ہوا بازی کے محکمے کے ایک ترجمان کا کہنا ہے کہ جب بات مسافر کی جسامت کے بڑے سائز کی آتی ہے تو اس پر ہر ایک ایئرلائنز کا صورت حال سے نمٹنے کا اپنا طریقہ ہوتا ہے۔ ایئرلائنز کسی طیارے کے پرواز کرتے وقت کسی کے وزن کا حساب لگاتی ہے لیکن اس میں مسافروں، ان کے سامان اور ایندھن وغیرہ کے وزن بھی شامل کیے جاتے ہیں۔

انھوں نے کہا ’زیادہ تر مسافروں کا وزن اوسط سے کم ہوتا ہے کیونکہ چھوٹ فراخدلی کے ساتھ دی جاتی ہے۔‘

زیادہ تر ایئرلائنز کا کہنا ہے کہ اگر آپ کا خیال ہے کہ آپ سیٹ کے مقابلے میں زیادہ بڑے ہیں تو آپ کو ٹکٹ لیتے وقت دو ٹکٹ لینی چاہیے۔ لیکن جب ‘اوور سائز’ کی بات آتی ہے تو کم ہی ایئرلائنز میں اس کے متعلق مخصوص ہدایات ہوتی ہیں۔

بہر حال امریکن ایئرلائنز کا کہنا ہے کہ ‘اگر کسی گاہک کا جسم سیٹ کی کہنی کی آخری حد سے ایک انچ سے زیادہ باہر جاتا ہے اور اس کے لیے سیٹ بیلٹ میں توسیع کی ضرورت پیش آتی ہے تو اسے ایک اور ٹکٹ لینا چاہیے۔‘


Automatic Translated By Google

Traveling from business class to an 11-hour flight to her hometown of Auckland after two weight loss surgeries in Bangkok was nothing short of a luxury.

But for both the sisters and their mother Hwana, it was no less a ‘shock’ when Thai Airways staff came to them with a tape and told them that they were ‘too big’ for their business class set. Are.

Six months have passed since this ‘disgusting’ incident, but in the mind of 59-year-old Hahana, the experience is still bitter.

They said: ‘Staff is saying’ big is bigger, bigger than us’ again and again. When they checked our size at the time they checked us out, people were lining up to see us. The way they treated us was so embarrassing that tears flowed through our eyes. ‘

The difficulty of understanding the language didn’t help either, and the staff barred them from entering the business class and placed them in economics class.

Hwana is a social worker and says she will not travel by air until she loses weight so that the traumatic experiences in Thai Airways do not happen again with her and her daughters.

He said: ‘We were excited to travel to business class, but instead we were shocked.’

Most airlines have seat belts for their wide-over-sized passengers.

But Thai Airways said that the seat belts in their business class are attached to the airbags, which means they cannot extend it. These people are not yet satisfied with this explanation.

Since their traumatic trip last summer, Hwana and her daughters have been demanding ticket money back from Thai Airways. But Airways has offered to pay the family only the difference between the price of business and economy class tickets.

He contacted the travel agent flight center from which he had booked a ticket. She says she will refund them all the money, but she has to wait more than six months for this.

When the BBC contacted Thai Airways, a spokeswoman said they had improved their warning system so agents could be kept informed of such issues.

This is very sad

The family was on a journey organized by Destination Beauty, which specializes in reducing the weight of its customers and sending them to Thailand for plastic surgery.

Destination Beauty’s chief executive Martin Olsen said that the way the airlines handle the situation has made them “very sad” and they are “shocked.”

Confessions are also on the part of Thai staff as many ‘obese people take business class tickets because they cannot comfortably sit on the set of economy class’.

When it comes to the size of the passenger size, each airlines have their own way of dealing with the situation, says a spokesman for the Civil Aviation Department. Airlines calculate one’s weight while flying an aircraft, but also include the weight of passengers, their luggage and fuel.

He said that ‘most travelers weigh less than average because discounts are paid freely.’

Most airlines say that if you think you are bigger than the seat, then you should get two tickets when booking a ticket. But when it comes to ‘over size’, few airlines have specific guidelines.

However, American Airlines says, “If a customer’s body goes more than an inch beyond the seat elbow limit and requires a seat belt extension, he should get another ticket.”

Saifullah Aslam

Owner & Founder of Sayf Jee Website

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close